منگل
2020-09-29
11:45 PM
Welcome مہمان
RSS
 
Read! the name of lord پڑھ اپنے رب کے نام سے
Home Sign Up Log In
اے عشق تو نے اکثر قوموں کو کھا کے چھوڑا - آپ اس وقت فورم پر تشریف فرما ہیں »
[ Updated threads · New messages · Members · Forum rules · Search · RSS ]
  • Page 1 of 1
  • 1
آپ اس وقت فورم پر تشریف فرما ہیں » کیٹگری فورم » شعر و شاعری » اے عشق تو نے اکثر قوموں کو کھا کے چھوڑا (اے عشق تو نے اکثر قوموں کو کھا کے چھوڑا)
اے عشق تو نے اکثر قوموں کو کھا کے چھوڑا
lovelessDate: سوموار, 2011-07-11, 10:11 AM | Message # 1
Colonel
Group: ایڈ منسٹریٹر
Messages: 184
Status: آف لائن
اے عشق تو نے اکثر قوموں کو کھا کے چھوڑا
جس گھر سے سر اٹھایا اس کو بٹھا کے چھوڑا



رایوں کے راج چھینے شاہونکے تاج چھینے

گردن کشوں کو اکثر نیچا دکھا کے چھوڑا



فرہاد کوہکن کی لی تو نے جان شیریں
اور قیس عامری کو مجنوں بنا کے چھوڑا



یعقوب سے بشر کو دی تو نے ناصبوری

یوسف سے پارسا پر بہتان لگا کے چھوڑا



عقل و خرد نے تجھ سے کچھ چپقلش جہاں کی
عقل و خرد کا تو نے خاکہ اڑا کے چھوڑا



افسانہ تیرا رنگین، روداد تیری دلکش

شعر و سخن کا تو نے جادو بنا کے چھوڑا



اک دسترس سے تیری حالی بچا ہوا تھا

اس کے بھی دل پہ آخر چرکا لگا کے چھوڑا


ہماری جنگ تو خود سے تھی،ڈھال کیا رکھتے
فقیر لوگ تھے ،مال و منال کیا رکھتے
 
آپ اس وقت فورم پر تشریف فرما ہیں » کیٹگری فورم » شعر و شاعری » اے عشق تو نے اکثر قوموں کو کھا کے چھوڑا (اے عشق تو نے اکثر قوموں کو کھا کے چھوڑا)
  • Page 1 of 1
  • 1
Search: